اسلام آباد : ا قوام متحدہ نے کہا کہ حیاتیاتی تنوع کے زوال سے انسانی خوراک کی کمی کا خدشہ ہے ، ایسے پودے ، جانور، مکھیاں اور کیڑے مکوڑے جو انسانی خوراک پیدا کرنے میں نہایت اہم کردار ادا کرتے ہیں وہ زوال کا شکار ہیں،ان پودوں، جانوروں اور ننھی حیات کی ایسی اقسام کے خاتمہ سے انسانی خوراک کو شدید خطرات لاحق ہو جائیں گے ۔ حیاتیاتی تنوع یا بائیو ڈائیورسٹی میں کمی کا سبب زمین کے استعمال کی تبدیلیاں، آلودگی میں اضافہ اور موسمیاتی تبدیلیاں ہیں۔ دنیا میں مختلف پودوں اور جانوروں کو بچانے کی حکمت عملی اپنائی جا رہی ہے لیکن یہ پودے ، جانور اور کیڑے مکوڑے اتنی تیزی سے پیدا نہیں ہو رہے جس کی ہمیں ضرورت ہے ۔ اقوام متحدہ کے ذیلی ادارے ‘‘عالمی ادارہ خوراک و زراعت (ایف اے او) ’’کی رپورٹ کے مطابق خوراک کیلئے ضروری بائیو ڈائیورسٹی سے مراد پودوں، جانوروں اور دیگر حیات میں تنوع ہے جس میں جنگلی حیات، پالتو جانور، پودے اور فصلیں شامل ہیں جو ہم کاشت کرتے ہیں۔ عالمی ادارے نے مستقبل کی غذائی ضروریات کے پیش نظر اس حوالے سے عالمی سطح پر مربوط اقدامات کی ضرورت پر زور دیا ہے ۔