کراچی: پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فور م وآل کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدر میاں زاہد حسین نے کہاہے کہ ایمنسٹی اسکیم حکومت کی طرف سے ملک کے ٹیکس سسٹم کو بہتر کرنے ، ٹیکس نیٹ کو بڑھانے اور پاکستان سے کالے دھن کو ختم کرنے کی طرف اہم قدم ہے ۔گزشتہ روز کاروباری برادری سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ لوگ معمولی ٹیکس ادا کر کے اندرون اور بیرون ملک اثاثہ جات کو ریگولر کرواسکتے ہیں ۔ اس اسکیم کا مقصد ریونیو بڑھانا نہیں بلکہ معیشت کو ریگولرائز کرنا ہے ،سابقہ حکومت نے سالانہ 12لاکھ آمدنی والے افراد کو ٹیکس سے مستثنیٰ قرار دیا تھا جسے آمدہ بجٹ میں برقرار رکھا جائے کیونکہ روپے کی قدر میں کمی اور دیگر عوامل نے عوام کی قوت خرید کو کم کر دیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ حکومتی اقدامات سے رئیل اسٹیٹ سیکٹر کو ریگولرائز کرنے میں مدد ملے گی اور معیشت کے اس بڑے شعبے میں قانونی طور پر سرمایہ کاری کے راستے کھلیں گے ۔ موجودہ صورتحال کو سامنے رکھتے ہوئے یہ اسکیم اندرون و بیرون ملک غیر قانونی اثاثہ جات رکھنے والوں کیلئے ایک بہت بڑی پیشکش ہے جس میں بہت تھوڑی ادائیگی سے ان کے اثاثہ جات قانونی ہوجائینگے اور وہ آبرومندانہ طور پر قانونی سرمایہ کاری کرسکیں گے ۔ میاں زاہد نے کہاکہ بیرون اور اندرون ملک افراد جو غیر قانونی سرمایہ اور اثاثہ جات رکھتے ہوں وہ اس موقع سے فائدہ اٹھائیں اور معیشت کی بہتری کیلئے اپنے آپ کو ٹیکس نیٹ میں شامل کرکے قانونی سرمایہ کاری کریں۔