کابل: افغان طالبان کی قندوز شہر پر بڑی چڑھائی،لڑائی میں 50افراد ہلاک اور59زخمی ہو گئے ۔جنگجوؤں نے شہر کے وسط میں پہنچنے کا دعویٰ کردیا۔رپورٹ کے مطابق گزشتہ رات طالبا ن نے بیک وقت کئی اطراف سے شہر پر حملے کر کے افغان سکیورٹی اہلکاروں کو بے بس کردیا۔مختلف علاقوں میں فائرنگ کا تبادلہ صبح تک جاری رہا۔طالبان کے ترجمان نے دعویٰ کیا ہے کہ جنگجوشہر کے وسط تک پہنچ چکے ہیں اور سرکاری عمارتوں پر قبضے کا سلسلہ جاری ہے ۔رپورٹ کے مطابق طالبان نے قندوز کے ہسپتال پر مکمل قبضہ کر لیا ہے جبکہ کئی مریضوں کو یرغمال بنائے جانے کی افغان وزارت دفاع نے بھی تصدیق کی ہے ۔ادھر قندوز پولیس کے ترجمان نے بتایا کہ شہر کی مشرقی اور مغربی اطراف میں حملہ آوروں کو سخت مزاحمت کا سامنا ہے۔افغان حکام نے لڑائی میں 35طالبان کی ہلاکت کا دعویٰ کرتے ہوئے کہاکہ قندوز شہر کا مکمل کنٹرول افغان حکومت کے پاس ہی ہے ۔ صدارتی ترجمان نے بتایا ہے کہ طالبان نے سول آبادی میں گھس کر حملوں کی حکمت عملی اپنائی تاہم سکیورٹی فورسز حملہ ناکام بنادیں گی ۔انہوں نے کہاکہ فضائی کارروائی سے طالبان حملہ آوروں کا صفایا کیا جاسکتا ہے مگر شہری ہلاکتوں کے اندیشے کے باعث یہ اقدام نہیں کیا جارہا ۔بتایاگیاہے کہ افغان فوج کے تازہ دم دستے قندوز شہر میں پہنچنا شروع ہو گئے ہیں۔ لڑائی میں 8شہریوں کی ہلاکت اور 59کے زخمی ہونے کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔یاد رہے 2015 کے بعد طالبان نے قندوز شہر پر یہ دوسرا بڑا حملہ کیاہے ۔