لاہور:  مریم نواز نے کوٹ لکھپت جیل لاہور میں والد سے ملاقات کی۔ شریف خاندان نے اپنے پیغام میں کہا کہ سابق وزیراعظم کی طبیعت خرابی کے بعد لیگی رہنما اور پارٹی کارکن کوٹ لکھپت جیل نہ آئیں۔ یاد رہے گزشتہ روز اپوزیشن لیڈر شہباز شریف نے سابق وزیراعظم نواز شریف کی صحت پر سخت تشویش اور فکر کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بیمار شخص کو سیاسی انتقام کا نشانہ بنانا کم ظرفی ہے، نواز شریف کا علاج نہ کرنا جرم ہے، بلا تاخیر عارضہ قلب سہولیات رکھنے والی علاج گاہ منتقل کیا جائے، مجرمانہ لاپرواہی کی ذمہ دار حکومت ہوگی۔ شہباز شریف کا کہنا تھا وزراء ای سی ایل میں نام ہونے کے باوجود بیرون ملک جاسکتے ہیں، لیکن ملک کو جوہری طاقت بنانے والے کو علاج گاہ لیجانے کی اجازت نہیں۔ انہوں نے کہا نواز شریف پاکستان کا فخر ہے، حکومت کے میڈیکل بورڈز کی رائے نہ ماننا حکومت کی بد نیتی ظاہر کرتی ہے۔